ٹریفک جام ایک بڑا مسئلہ۔ آخر کب تک؟

ٹریفک جام ایک بڑا مسئلہ۔ آخر کب تک؟

Aamer Habib News Reporter

Aamer Habib News Reporter

ٹریفک جام ایک بڑا مسئلہ۔ آخر کب تک؟
ٹریفک میں اضافے کے باعث اور کون کون سے مسائل کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے؟
ٹریفک جام ہونے کی اہم وجوہات کیا ہیں؟دن بہ دن گاڑیوں اور موٹر سائیکلوں کی تعداد میں اضافہ
کیوں ہوتا جا رہا ہے؟ ٹریفک میں اضافے کے باعث اور کون کون سے مسائل کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے؟ ٹریفک جام ہونے کی اہم وجوہات میں گاڑیوں اور موٹر سائیکلوں کی تعداد میں دن بہ دن ہونے والا اضافہ، سڑکوں کا تنگ اور ٹوٹا پھوٹا ہونا سرِفہرست ہیں۔ ٹریفک جام ہونے کی وجہ سے عوام کو مختلف مسائل کا سامنا ہے جن میں مقررہ مقام پر پہنچنے میں تاخیر اور بڑھتی ہوئی فضائی آلودگی اہم ترین ہیں۔ سڑکوں کی تنگی، ٹوٹ پھوٹ اور اکثر علاقوں میں باقاعدہ سگنل نظام نہ ہونے کے باعث ٹریفک جام کی صورتِحال پیدا ہو جاتی ہے۔ایسے میں اکثر ٹریفک وارڈن کا بھی کہیں نام و نشاں نہیں ہوتا جوباری باری ایک سمت کی ٹریفک کو روک کر دوسری جانب کی ٹریفک کو رواں کر سکے۔ ہر انسان ایک دوسرے سے پہلے پہنچنا چاہتا ہے اور نتیجہ ٹریفک کے بہاؤ میں رکاوٹ کی صورت سب ہی کو نقصان دیتا ہے۔ ایسا تنگ سڑکوں کے چوک میں رونما ہونا ایک عام بات ہے۔ دوسری اہم وجہ گاڑیوں اور موٹر سائیکلوں کی تعداد میں اضافہ اور کثرت ہے جسکی بنیاد قرض اور آسان اقساط پر انکی دستیابی ہے۔ امیر گھرانوں کی یہ صورتِحال ہے کہ گھر میں تین گاڑیاں موجود ہوں تو گھر کے تین افراد الگ الگ گاڑی میں جانا پسند کرتے ہیں۔ اسکے باعث جہاں ایک گاڑی ضرورت پوری کر سکتی ہو وہاں تین گاڑیاں ٹریفک کا دباؤ بڑھانے کا موجب بنتی ہیں۔فضائی آلودگی بڑھنے سے کینسر،جلد، سانس اور پھیپھڑوں کے امراض میں تیزی سے اضافہ واقع ہو رہا ہے۔

حکومت متوسط اور پسماندہ علاقوں میں سڑکوں کو کشادہ اور پختہ کرنے کے بارے میں کیوں غور نہیں کرتی؟ کیا کبھی لوگوں کو خود سے احساس ہوگا کہ جہاں ایک گاڑی ضرورت پوری کر سکتی ہے وہاں وہ ٹریفک میں اضافے کا باعث بن کر نہ خود پریشان ہوں اور نہ ہی دوسروں کیلئے تکلیف کا باعث بنیں؟ فضائی آلودگی کو بڑھانے میں خود ہمارے علاوہ کسی کا ہاتھ ہے؟کیا کبھی مطلوبہ جگہوں پر ٹریفک وارڈن کی درکار تعیناتی کو عمل میں لایا جائے گا؟ کیا کبھی اشاروں کے نظام کو بہتر بنانے کے بارے میں اقدام کیے جائیں گے؟

Aamer Habib News Reporter