آپ نے کبھی یہ حقیقت جاننے کی کوشش کی

آپ نے کبھی یہ حقیقت جاننے کی کوشش کی

Aamer Habib Article Writer

Aamer Habib Article Writer

آپ نے کبھی یہ حقیقت جاننے کی کوشش کی
اپنے منتخب شدہ شعبے میں ناکامی یا نااہلیت کے مسائل کا سامنا کر رہے ہیں۔

کیا آپ اپنے منتخب شدہ شعبے میں ناکامی یا نااہلیت کے مسائل کا سامنا کر رہے ہیں؟ آپ نے کبھی یہ حقیقت جاننے کی کوشش کی کہ آپ کیا بہترین کر سکتے ہیں اور کیا نہیں؟ کبھی اپنے اندر موجود صلاحیتوں کو صحیح سے پہچاننے کی کوشش کی؟ جیسے ہیرے کی اصلی پہچان جوہری کو ہوتی ہے ، ایسے ہی ایک انسان کی صحیح پہچان خود اسے ہی ہو سکتی ہے۔ چاہے کوئی کتنی ہی گہرائی میں آپکو جانچ یا پرکھ لے مگر حقیقت یہی ہے کہ آپ سے بہتر آپکو کوئی نہیں پہچان سکتا۔ بات صرف جاننے اور پہچانے کی ہے۔ یہ بہت ہی غلط نظریہ ہے کہ ایک انسان اگر کسی ایک شعبے یا ہنر میں کمزور ہے تو اسے نالایق یا کاہل سمجھ لیا جائے ۔ ہو سکتا ہے کہ اس میں کوئی دوسری ایسی خوبی موجود ہو جو ان انسانوں میں موجود نہ ہو جنہیں ہم اس سے بہتر تصور کر رہے ہوں۔ہمارے معاشرے میں زیادہ تر لوگ اسی مسئلے سے دو چار ہیں۔ خدا نے ہر کسی کو خداداد صلاحیت اور قابلیت سے نوازا ہوتا ہے، بات صرف کھوجنے کی ہے۔مثال کے طور پر، کیا یہ انصاف ہوگا کہ ایک مچھلی کو ہم درخت پر چڑھنے اور ایک بندر کو تیرنے کے ہنر کے پیمانے پر جانچیں؟یقیناً یہ بالکل غلط ہے۔ دوسری جانب اگر ہم انکی صلاحیتوں کا تجزیہ کرتے ہوئے مچھلی کو تیرنے اور بندر کو درخت پر چڑھنے کے ہنر کے پیمانے پر جانچیں تو دونوں ہی اپنے اپنے فن میں یکتا اور اپنی مثال آپ ہیں۔بالکل اسی طرح ایک انسان کے لیے خود میں چھپے ہنر، قابلیت اور صلاحیت کی انتہاء پرکھ نا اور اسکا تجزیہ کرنا بہت ضروری ہے ۔ورنہ انسان ہمیشہ کیلئے یہ جاننے سے قاصر رہتا ہے کہ اس میں کیا کچھ کر دکھانے اور پا لینے کی صلاحیت اور قابلیت تھی۔ الغرض کہ آپ کبھی جان ہی نہیں پاتے کہ آپ ہیں کیا،اور اس لا پرواہی کے باعث نہ صرف ساری زندگی ایک معمولی انسان بن کر گزار دیتے ہیں بلکہ اس شعبے میں اپنا وقت ضائع کرتے رہتے ہیں جو آپکے لیے ہے ہی نہیں۔

نتیجہ ناکامی کی صورت میں آپکے راہ میں مایوسی بن کر کھڑا ہو جاتا ہے۔کیا آپ نے کبھی خود کو جاننے اور پرکھنے کی کوشش کی؟ کیا کبھی اپنا تجزیہ کیا؟ کیا آپ نے کبھی خود میں موجود صلاحیت اور قابلیت کو بروئے کار لا کر اسکا بھر پور فائدہ اٹھاکر بہترین نتائج حاصل کرنے کی کوشش کی؟ اگر نہیں تو یہی وقت ہے!

Aamer Habib Article Writer